پنجاب نے نواز شریف کے سیل سے اے سی کو دور کرنے کے لئے آئی جی جیل سے مطالبہ کیا ہے

12 جولائی کے خط کے مطابق نواز شریف کے سیل سے اے سی دور کر دیا جانے کی درخواست کی گئی ہے اور اس کو ہم مزید تفصیل میں بتاتے ہیں کے ایسا کس لنے کیا جا رہا ہے اور مسلم لیگ نون کا کیا رادے عمل ہے اور کس طرح ان کے کارقونوں کو ناراض ہے اس سے.

عمران خان نے اپنے خطاب میں جو ان نی اتوار کو امریکا میں کیا اور کہا کے وہ نواز شریف اور باقی لوگو کے جیل سی اے سی نکال دیے جایئں گے جو بعد ازاں اس بات کو لے کر مسلم لیگ نوں کے سب میمبر نے اسے غلط سمجھا اور سب نے یہ کہا کے عمران خان کو اس طرح نہی کہنا چاینے تھا اور سوشل میڈیا پر اس بات کو بھوت زیادہ مسلہ بنایا جا رہا ہے . ساتھ میں یہ بھی بتایا گیا کہ جیل کے سیکرٹری نے کہا ہے کے اس کو کسی بھی اس طرح کے خط کے بارے میں معلوم نہی ہے اور نا ہی ایسا کچھ ہونے لگا ہے

پنجاب حکومت کی طرف سے کہا گیا ہے کہ نواز شریف کے سیل سے اے سی کو نکال دیا جے اور ساتھ میں ٹی وی کو بھی نکال دو . یہ سب کچھ عمران خان کے کہنے پر کیا گیا ہے کیوں کہ عمران خان نے امریکہ میں علان کر دیا تھا کہ وہ کسی بھی سیاسی بندے کو یہ سب نہے دیں گے جیل میں . اس بات کو کوٹ لکھپت جیل کے افسر نے اس بات سے انکار کیا ہے کے اسے کسی بھی خط کا ہم کو علم نہی ہے . اور اس پر مریم نواز نے کہا ہے کہ میرے والد کو مرانے کے لیے کیا جا رہا ہے

اور ساتھ ہی ایک اور خط میں کہا گیا ہے کہ عمران خان کی طرف سی جو ١٢ جولائی کو بیجھا گیا اور اس میں پوچھا گیا کہ اب تک اس پر کیوں عمل نہی کیا گیا اور اس خط کا بھی عتراف کرنے سے انکار کیا گیا اور ساتھ ہی یہ کہا ہے کہ عمران خان کی دیی ہوئی ہدایت پر عمل کیا جاتے گا

سوشل میڈیا پر ایک تصویر وائرل ہو گی جس میں نواز شریف کے اے سی اور ٹی وی کو نکالا جا رہا تھا اور اس بات کو لے کر اپوزیشن پارٹی والے بیحد ناراض دکھائی دے رہے ہے . اور ان کے کارکن بھی بہوت ناراض ہیں . اور ساتھ ہی یہ بتایا جا رہا ہے کہ ڈاکٹر کا کہنا ہے کہ انکی صحت نا ساز گار ہے تو ان کے روم سے اے سی کو نکلنا انکی صحت کے لیے اچھا نہی ہو گا

Leave a Reply

Follow Us